+ Reply to Thread
Results 1 to 14 of 14

Thread: احناف پر ایک اعتراض ۔ فرض اور واجب میں فرق کیا ہے

  1. Join Date
    Jul 2012
    Posts
    6
    Thanks
    24
    Thanked 8 Times in 5 Posts

    احناف پر ایک اعتراض ۔ فرض اور واجب میں فرق کیا ہے

    ایک غیر مقلدین کی سائٹ پر ااحناف سے ایک سوال ہے جس کا جواب مطلوب ہے ۔
    سوال کچھ یوں ہے :

    احناف کے نزدیک فرض کی تعریف یہ ہے کہ جو ـحکم دلیلِ قطعی (یعنی قرآن) سے ثابت ہو اور واجب کی تعریف یہ ہے کہ جو ـحکم دلیلِ ظنی (یعنی حدیث) سے ثابت ہو۔

    میرا سوال یہ ہے کہ نمازِ حنفی کے بارے میں لکھی گئی کتب میں غسل کے ٣ (تین) فرائض بتائے گئے ہیں۔

    یہ تین فرائض قرآن میں کہاں ہیں ؟؟

    دیوبند کی سائٹ پر بھی فرض اور واجب کی بھی یہی تعریف ہے ۔

    http://darulifta-deoband.org/showuse...ll=ur&id=28718

  2. Join Date
    Dec 2009
    Posts
    378
    Thanks
    8
    Thanked 15 Times in 11 Posts

    Jadli Ghair Muqallid ka wawaila tu koi 'ajib baat nahin. magar darul 'uloom k muftiyaan ka fatwa buhut hi alarming hai.

    Fard hadeeth se bhi thabit husakta hai agar hadeeth qati'ius subut hu aur qa'i ud dalalat hu. Ghalban isi tarah quran se bhi agar daleel qatiud dalalat na hu tu sirf wajib thabit huga.

  3. Join Date
    Aug 2010
    Posts
    120
    Thanks
    80
    Thanked 112 Times in 49 Posts

    اسلام علیکم،
    جناب آپ کے سوال یا غیر مقلدین کے اعتراض کا صحیح جواب تو اہل علم ہی دیں گے۔ میری عرض یہ ہے کہ فرض میں صرف قرآن ہی نہیں بلکہ حدیثِ متواتر بھی شامل ہیں۔ دارلعلوم دیوبند کا جو فتوٰی جو آپ نے دیا ہے ہے اس میں دلیلِ قطعی کی بات ہوئی ہے جس کی ایک مثال قرآن بتادی گئی باقی تفصیل کہ لیے شیخ الاسلام حضرت مفتی تقی عثمانی صاحب کی کتاب کا مطالعہ کیا جا سکتا ہے۔
    نیچے کتاب کا اسکیں موجود ہے۔
    Name:  Page01 Taqleed.jpg
Views: 438
Size:  136.9 KB
    Name:  Page02 Taqleed.jpg
Views: 418
Size:  204.9 KB
    Name:  Page03 Taqleed.jpg
Views: 418
Size:  180.2 KB
    Name:  Page04 Taqleed.jpg
Views: 428
Size:  211.1 KB

  4. The Following 3 Users Say Thank You to Mulla For This Useful Post:

    nomanmuhammad (04-23-2013), usman bin rashid (09-15-2012), تلمیذ (09-13-2012)

  5. Join Date
    Aug 2010
    Posts
    120
    Thanks
    80
    Thanked 112 Times in 49 Posts

    ویسے تو جواب کے لیے میرے خیال میں ایک ہی صفحہ کافی تھا مگر دلچسپی کے لیے ذیادہ صفحات منسلک کر دیے۔
    Name:  Page05 Taqleed.jpg
Views: 411
Size:  147.9 KB
    Name:  Page06 Taqleed.jpg
Views: 408
Size:  158.5 KB
    Name:  Page07 Taqleed.jpg
Views: 404
Size:  108.6 KB

  6. The Following 3 Users Say Thank You to Mulla For This Useful Post:

    Shahzad Sultan (09-12-2012), usman bin rashid (09-15-2012), تلمیذ (09-13-2012)

  7. Join Date
    Aug 2010
    Posts
    120
    Thanks
    80
    Thanked 112 Times in 49 Posts

    Quote Originally Posted by Salafi View Post
    Jadli Ghair Muqallid ka wawaila tu koi 'ajib baat nahin. magar darul 'uloom k muftiyaan ka fatwa buhut hi alarming hai.

    Fard hadeeth se bhi thabit husakta hai agar hadeeth qati'ius subut hu aur qa'i ud dalalat hu. Ghalban isi tarah quran se bhi agar daleel qatiud dalalat na hu tu sirf wajib thabit huga.

    مسٹر سلفی کبھی تعصب کی عینک اتار کر بھی دیکھ لیا کریں۔ ہر فتوٰی میں پوری تفصیل نہیں ہوتی، اکثرمیں مقصد اور مدعا بیان کیا جاتا ہے۔ اور بھائی ہمارے پاس ایسا کوئی الارمنگ یعنی گھنٹی بجنے والا جواز نہیں۔ بالفرض کوئی فتوٰی غلط بھی ہو جائے تو اس کی تصحیح ہو جاتی ہے۔
    پھر "ہُو یو آر" جو میرا خیال بیان کررہے ہو۔
    حیرت ہوتی ہے آپ جیسے متعصب لوگوں پر جو ہر وقت اہل حق میں خامیاں دھونڈتے رہتے ہو۔ اللہ ھدایت دے۔
    غالباً آپ کا دعوی ہے کہ آپ کا تعلق تھانوی خانوادہ سے ہے۔ کبھی اپنا شجرہ نسب شئیر کرنا پسند کریں گے۔
    جزاک اللہ۔ی

  8. The Following User Says Thank You to Mulla For This Useful Post:

    Shahzad Sultan (09-12-2012)

  9. Join Date
    Dec 2009
    Posts
    378
    Thanks
    8
    Thanked 15 Times in 11 Posts

    Quote Originally Posted by Mulla View Post

    مسٹر سلفی کبھی تعصب کی عینک اتار کر بھی دیکھ لیا کریں۔ ہر فتوٰی میں پوری تفصیل نہیں ہوتی، اکثرمیں مقصد اور مدعا بیان کیا جاتا ہے۔ اور بھائی ہمارے پاس ایسا کوئی الارمنگ یعنی گھنٹی بجنے والا جواز نہیں۔ بالفرض کوئی فتوٰی غلط بھی ہو جائے تو اس کی تصحیح ہو جاتی ہے۔
    پھر "ہُو یو آر" جو میرا خیال بیان کررہے ہو۔
    حیرت ہوتی ہے آپ جیسے متعصب لوگوں پر جو ہر وقت اہل حق میں خامیاں دھونڈتے رہتے ہو۔ اللہ ھدایت دے۔

    Fatwa mein 'ijmalan' hunay wali ghalti ka ibhaam tak nahin husakta. Kyun k alfaaz bilkul wazeh hain. Jaisa k aap k muhyya kyay gay iqtebaas se wazeh hai. darul ifta' se jari hunay wala fatwa kisi aik shakhآs ki ghalti bhi nahi huta. Mein ne kab ta'assub ka muzahera kiya bhai ?

    غالباً آپ کا دعوی ہے کہ آپ کا تعلق تھانوی خانوادہ سے ہے۔ کبھی اپنا شجرہ نسب شئیر کرنا پسند کریں گے۔
    What the hell are you talking about ?

  10. Join Date
    Aug 2010
    Posts
    120
    Thanks
    80
    Thanked 112 Times in 49 Posts

    Quote Originally Posted by Salafi View Post

    Fatwa mein 'ijmalan' hunay wali ghalti ka ibhaam tak nahin husakta. Kyun k alfaaz bilkul wazeh hain. Jaisa k aap k muhyya kyay gay iqtebaas se wazeh hai. darul ifta' se jari hunay wala fatwa kisi aik shakhآs ki ghalti bhi nahi huta. Mein ne kab ta'assub ka muzahera kiya bhai ?



    What the hell are you talking about ?
    Yar tum buhut farigh ho, dimagh se, Wahan ye nahi kaha gaya kai Jo Hukm sirf Quran mai ho, balkai, kaha gaya hai, kai, Nas-e-Qatayee, Jis ki sb se bari missal Quraan hai.

    Quote Originally Posted by Salafi View Post
    Fatwa mein 'ijmalan' hunay wali ghalti ka ibhaam tak nahin husakta.
    Bhai, Masoom Sirf Anbia A.S. Hain, un kai ilawa Har shakh se ghalti ho sakti hai.
    Mai nay ye nahi kaha kai Darul Uloom ka fatwaa ghalat hai.

    Quote Originally Posted by Salafi View Post
    What the hell are you talking about ?
    I am talking about your ancestors, if you know them. Otherwise thanks God, You are not related to the noble family of thana Bhawan.

  11. The Following User Says Thank You to Mulla For This Useful Post:

    Shahzad Sultan (09-13-2012)

  12. Join Date
    Apr 2011
    Posts
    319
    Thanks
    34
    Thanked 195 Times in 102 Posts

    بھائیوں ،

    بات واضح ہوگئی ہے اور ابھی میرے خیال میں غیر ضروری بحث نہ کریں ، شیطان دلوں میں نفرتیں ڈال دیتا ہے . اپنی طاقت اور وقت کو صحیح جگہ پر استعمال کریں .

    آپ لوگوں ک بیچ میں بولنے کے لئے معزرت .

    الله کریم ہمیں ہمیشہ ہدایت پر رکھے اور ہماری خطائیں معاف فرماۓ
    ، آمین


  13. The Following 3 Users Say Thank You to Abdul Ahad For This Useful Post:

    Mulla (09-13-2012), أمة الله (09-16-2012), تلمیذ (09-13-2012)

  14. Join Date
    Dec 2009
    Posts
    378
    Thanks
    8
    Thanked 15 Times in 11 Posts

    Yar tum buhut farigh ho, dimagh s,
    Assalam-o-alaikum
    Wahan ye nahi kaha gaya kai Jo Hukm sirf Quran mai ho, balkai, kaha gaya hai, kai, Nas-e-Qatayee, Jis ki sb se bari missal Quraan hai.

    Yeh aap ki ta'weel hai. Fatwa mein likha hai nas-e-qat'i Ya'ni Quran. Jis ki sab se bari misaal Quran hai yeh aap ki ikhtira hai. Fatwa k alfaaz ghair mubham aur mutlaq hain.

    Bhai, Masoom Sirf Anbia A.S. Hain, un kai ilawa Har shakh se ghalti ho sakti hai.
    Mai nay ye nahi kaha kai Darul Uloom ka fatwaa ghalat hai.

    AZDAAD KI JAMA'. As expected.
    I am talking about your ancestors, if you know them. Otherwise thanks God, You are not related to the noble family of thana Bhawan.

    I was wondering why the hell are you asking me this question ? When did i claimed this ?

    And, yeah thanx God i know my ancestors and they are not connected to thanvi. Neither literally nor
    spiritually.

  15. Join Date
    Feb 2010
    Posts
    357
    Thanks
    218
    Thanked 420 Times in 202 Posts

    اصل فرض غسل میں سارے جسم پر پانی بہاناہے۔لیکن چونکہ ناک اورمنہ دونوں بند رہتے ہیں اوراس میں بغیر پانی پہنچائے پانی کا پہنچنامشکل ہے لہذااس کو الگ سے ذکر کیاگیاہے۔لہذااسی کو احناف نے کلی اورناک میں پانی پہنچانے کو الگ فرض کے طورپر ذکر کیاہے۔اوریہ ان کی دقیقہ سنجی کی مثال ہے۔
    اگرصرف یہ کہاجاتا کہ پورے جسم پر پانی کابہانافرض ہے توبہت سارے لوگ اس غلط فہمی کا شکار رہ جاتے کہ شاورکے نیچے کھڑے ہوگئے اورسارے جسم پر پانی پہنچ گیاجب کہ عمومی طورپر یہ مشاہدہ ہے کہ ناک اورمنہ میں پانی پہنچائے بغیر نہیں پہنچتا۔اس کو الگ سے ذکر کرکے یہ بتادیاگیاہے کہ ان جگہوں پر بھی پانی پہنچانا فرض ہے۔اب یہ آپ کی مرضی ہے کہ چاہیں توصرف اس کو ایک فرض تسلیم کریں یاغسل کے تین فرض بنادیں۔


    فَالْحَاصِلُ أَنَّ إمْرَارَ الْمَاءِ عَلَى جَمِيعِ الْبَدَنِ فَرْضٌ لِقَوْلِهِ - صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ - «تَحْتَ كُلِّ شَعْرَةٍ جَنَابَةٌ أَلَا فَبُلُّوا الشَّعْرَ وَأَنْقُوا الْبَشَرَةَ»
    المبسوط للسرخسی145
    علامہ کاسانی لکھتے ہیں۔
    فَالْغُسْلُ فِي اللُّغَةِ اسْمٌ لِلْمَاءِ الَّذِي يُغْتَسَلُ بِهِ لَكِنْ فِي عُرْفِ الْفُقَهَاءِ يُرَادُ بِهِ غَسْلُ الْبَدَنِ، وَقَدْ مَرَّ تَفْسِيرُ الْغَسْلِ فِيمَا تَقَدَّمَ أَنَّهُ الْإِسَالَةُ، حَتَّى لَا يَجُوزُ بِدُونِهَا.

    (وَأَمَّا) رُكْنُهُ فَهُوَ إسَالَةُ الْمَاءِ عَلَى جَمِيعِ مَا يُمْكِنُ إسَالَتُهُ عَلَيْهِ مِنْ الْبَدَنِ مِنْ غَيْرِ حَرَجٍ مَرَّةً وَاحِدَةً حَتَّى لَوْ بَقِيَتْ لُمْعَةٌ لَمْ يُصِبْهَا الْمَاءُ لَمْ يَجُزْ الْغُسْلُ، وَإِنْ كَانَتْ يَسِيرَةً لِقَوْلِهِ تَعَالَى {وَإِنْ كُنْتُمْ جُنُبًا فَاطَّهَّرُوا} [المائدة: 6] ، أَيْ: طَهِّرُوا أَبْدَانَكُمْ، وَاسْمُ الْبَدَنِ يَقَعُ عَلَى الظَّاهِرِ، وَالْبَاطِنِ فَيَجِبُ تَطْهِيرُ مَا يُمْكِنُ تَطْهِيرُهُ مِنْهُ بِلَا حَرَجٍ، وَلِهَذَا وَجَبَتْ الْمَضْمَضَةُ، وَالِاسْتِنْشَاقُ فِي الْغُسْلِ، لِأَنَّ إيصَالَ الْمَاءِ إلَى دَاخِلِ الْفَمِ، وَالْأَنْفِ مُمْكِنٌ بِلَا حَرَجٍ، وَإِنَّمَا لَا يَجِبَانِ فِي الْوُضُوءِ لَا، لِأَنَّهُ لَا يُمْكِنُ إيصَالُ الْمَاءِ إلَيْهِ بَلْ، لِأَنَّ الْوَاجِبَ هُنَاكَ غَسْلُ الْوَجْهِ، وَلَا تَقَعُ الْمُوَاجِهَةُ إلَى ذَلِكَ رَأْسًا

    بدائع الصنائع فی ترتیب الشرائع1/34
    ان دونوں اقتباس سے یہ واضح ہوگیاکہ احناف نے غسل میں کلی اورناک میں پانی ڈالنے کوفرض کیوں کہاہے۔درحقیقت یہ دونوں ذیلی فرض اسی ایک فرض کی تکمیل کیلئے ہیں یہ الگ سے کوئی نئی چیز نہیں ہے۔والسلام

  16. The Following 5 Users Say Thank You to جمشید For This Useful Post:

    Mulla (09-13-2012), sahj (04-27-2013), usman bin rashid (09-15-2012), أمة الله (09-16-2012), تلمیذ (09-13-2012)

  17. Join Date
    Aug 2010
    Posts
    120
    Thanks
    80
    Thanked 112 Times in 49 Posts

    Quote Originally Posted by Salafi View Post
    Assalam-o-alaikum
    وعلیکم اسلام

  18. Join Date
    Jul 2012
    Posts
    6
    Thanks
    24
    Thanked 8 Times in 5 Posts

    جزاک اللہ جمشید بھائی بہت مدلل جواب دیا ۔ شکریہ

  19. The Following 2 Users Say Thank You to تلمیذ For This Useful Post:

    usman bin rashid (09-15-2012), جمشید (09-14-2012)

  20. Join Date
    Feb 2010
    Location
    Karachi
    Posts
    143
    Thanks
    236
    Thanked 168 Times in 69 Posts

    اسلامُ علیکم۔!
    اصل بات یہ ہے کہ ہمیں اس بات کا علم ہونا چاہئے کہ کس درجہ کا مسئلہ کس درجہ کی دلیل سی ثابت ہو تا ہے۔ ذیل میں کچھ مختصر سی تفصیل تحفۃ المناظر افادات از مناظرِ اسلام مولانا ڈاکٹر منظور احمد مینگل حفظہ اللہ سے الفاظ کے فرق سے نقل کی جاتی ہے۔

    فرض اور حرام:
    فرض اور حرام عمل ہمیشہ قطعی دلیل سے ثابت ہو تا ہے، وہ دلیل جس سے فرض اور حرام عمل ثابت کیا جا رہا ہے وہ ثبوت کے اعتبار سے بھی قطعی ہو اور دلالت کے اعتبار سے بھی قطعی ہو یعنی قطعی الثبوت مع قطعی الدلالت ہو۔
    قرآن پورا کا پورا قطعی الثبوت ہے، مگرہر آیت دلالت میں قطعی نہیں۔
    احادیثِ متواترہ قطی الثبوت ہیں۔ (متواترات کی تعریف اور اقسام آگے آرہی ہیں)
    اور اسی طرح وہ خبرِ واحد جسکو تلقی باالقبول حاصل ہو وہ بھی قطعی الثبوت ہیں۔
    قرآن کی جو آیات قطعی الدلالت ہوں اور اسی طرح جو اخبارِ متواترہ قطعی الدلالت ہوں اور وہ خبرِواحد جسکو تلقی بالقبول حاصل ہو اور وہ دلالت میں بھی قطعی ہو، ان سے اثبات کی جانب میں فرض حکم ثابت ہو گا اور نہی کی جانب میں حرام حکم ثابت ہو گا۔
    واجب،سنت اور مکروہِ تحر یمی:
    قرآن مجید کی وہ آیات جو ظنی الدلالت ہوں اور وہ اخبارِ آحاد جو قطعی الدلالت ہوں یا وہ اخبارِ متواترہ جوظنی الدلالت ہوں یا وہ خبرِواحد جسکو تلقی بالقبول حاصل ہو اور وہ دلالت میں ظنی بھی ہو ،یعنی

    ۱ـ قطعی الثبوت ظنی الدلالت (قرآن مجیدکی آیات یااخبارِ متواترہ یا وہ خبرِ واحد جسکو تلقی بالقبول حاصل ہو اور وہ دلالت میں بھی ظنی ہوں ) ۔
    ۲ـ ظنی الثبوت قطعی الدلالت(خبرِ واحد جو دلالت میں قطعی ہو) ۔
    ان دونوں اقسام سے اثبات کی جانب میں واجب اور سنت کا حکم ثابت ہو گااور نہی کی جانب میں مکروہِ تحریمی کا حکم ثابت ہو گا۔
    باقی واجب عملی اعتمار سے تو فرض کے برابر ہوتا ہے مگر اعتقادی اعتبار سے فرض کے برابر نہیں ہوتا۔
    مندوب و استحباب اور مکروہِ تنزیہی:
    دلیل کا ثبوت بھی ظنی ہو اور اسکی دلالت بھی ظنی ہو( وہ خبرِ واحد جو دلالت میں ظنی ہو) ۔
    اس قسم کی دلیل سے اثبات کی جانب میں مندوب(جائز) و مستحب حکم ثابت ہو گا اور نہی کی جانب میں مکروہِ تنزیہی کا حکم ثابت ہو گا۔

    جس حدیث کو تلقی بالقبول حاصل ہو وہ علمِ یقین کا فائدہ دیتی ہے، علامہ ابنِ کثیرؒ تلقی بالقبول کے بارے میں فرماتے ہیں:


    ’’ثم وقفت بعد ھذا علی کلام لشیخنا العلامۃ بن تیمیہ أ نہ نقل القطع با الحدیث الذی تلقتۃ الأ مۃ بالقبول عن جماعتٍ من الأئمۃ، منھم القاضی عبد الوھاب المالکی والشیخ أبوحامد الاسفر ائنی والقاضی أبو الطیب الطبری و الشیخ أبو إسحاق الشیرازی من الشافعیۃ، وابن حامد وأبویعلی ابن الفراء و أبوالخطاب وابن الزاغونی و أمثالھم مب الحنابلۃ، وشمس الأئمۃ السرخسی من الحنفیۃ، قال: وھو قول أکثر أھل الکلام من الأشعریۃ وغیرھم کأبی أسحاق الاسفرائنی وابن فورک وقال: وھو مذھب أھل الحدیث قاطبۃً ومذھب السلف عامۃً، وھو معنی ماذکرہ ابن الصلاح استنبا طاً فوافق فیہ ھؤلآء الأئمۃ‘‘
    (الباعث الحثیث، قبیل النوع الثانی: الحسن: ۲۹۔۳۰، دار التراث قاھرۃ بحولہ تحفۃ المناظر ص ۷۹،۸۰ مکتبہ الحرمین اردو بازار لاہور۔)

    ترجمہ: ’’علامہ ابن تیمیہ کا ایک مضمون میری نظر سے گزرا، جس میں انہوں نے آئمہ کی ایک جماعت سے نقل کیا کہ جب کسی حدیث کو تلقی باالقبول حاصل ہو جائے تو وہ علمِ یقین کا فائدہ دیتی ہے، منجملہ ان علماء کے شوافع میں سے قاضی عبدالوھاب مالکی، شیخ ابو حامد اسفرائنی، قاضی ابو الطیب طبری، شیخ ابو اسحٰق شیرازی، حنابلہ میں سے ابن حامد، ابو یعلی، ابن الفراء، ابوالخطاب، ابن زاغونی وغیرہ ہیں، احناف میں شمس الآئمہ سرخسی کا بھی یہی مذہب ہے کہ جس حدیث کو تلقی بالقبول حاصل ہو وہ علمِ یقین کا فائدہ دیتی ہے۔
    پھر فرمایا: اہل کلام میں سے اکثر اشاعرہ جیسے ابو اسحاق اسفر ائنی، ابن فورک وغیرہ کا بھی یہی مذہب ہے، مزید یہ کہ تمام محدثین اور سلف کا بھی یہی مذہب ہے۔ یہ وہی بات ہے جسے ابن صلاح نے بطور استنباط بیان کیا اور ان آئمہ کی موافقت کی۔‘‘

    مندرجہ بالا اقتباس سے یہ بھی معلوم ہوا کہ جس حدیث (خبرِواحد)کو تلقی باالقبول حاصل نہ ہو وہ علمِ یقیں کا فائدہ نہیں دیتی بلکہ علمِ ظن کا فائدہ دیتی ہے۔
    آج کل کے غیر مقلدین خصوصاًٍ زبیر علیزئی وغیرہ کا مسلک ہے کہ خبرِواحد علمِ یقین کا فائدہ دیتی ہے، یہ حوالہ ان پر حجت ہے۔
    (اوکما قال الإتحاف لاباسم)
    تواتر کی اقسام:
    عام محدثین کے ہاں تواتر کی دو ہی اقسام ہیں
    ۱: توترِ لفظی۔
    ۲:تواترِ معنوی۔
    سب سے پہلے امام العصر علامہ انور شاہ کشمیریؒ نے تواتر کی چار اقسام بنائیں ہیں جو اپنی افادیت اور جامع مانع ہونے کے اعتبار سے بہت مفید ہیں۔
    ۱ـ توتر الاسناد:
    وہ احادیث جن کی سند کی ابتداء سے لے کر انتہاء تک ہر طبقے میں اسکے اتنے راوی ہوں کہ ان سب کا جھوٹ پر اتفاق کرنا عادۃًٍ محال ہو، اس تواتر کو تواترِ محدثین بھی کہتے ہیں جیسے آ پ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمان کہ جس نے مجھ پرجھوٹ بولااس نے اپنا ٹھکانہ جہنم میں بنا لیا وغیرہ۔
    ۲ـ تواترالطبقہ:
    ایک خلقِ خدا کوئی بات ایک دوسرے سے نقل کرے اور سند نہ ہو، اگر سند کی تحقیق کی جائے تو سند نہیں ملے گی۔
    قرآن مجید بھی تواترالطبقہ کے طور پر ثابت ہے، اور حضرت بنوریؒ فرماتے ہیں کہ تواترالطبقہ تواترالا سناد سے بھی زیادہ قوی ہوتا ہے۔
    ۳ـ تواتر العمل والتوارث:
    ابتداء اسلام سے لے کر اب تک کوئی عمل جس پر عمل ہوتا آ رہا ہو اور اتنی بڑی جماعت اُپر عمل کر رہی ہو کہ سب کا جھوٹ پراتفاق کرنامحال ہو، جیسےوضو میں مسواک، میت کا غسل،کفن،دفن،نماز کا طریقہ (علاوہ اجتہانی اختلاف) وغیرہ۔

    ۴ـ تواترالقدرالمشترک:
    احادیث کے الفاظ اگر چہ مختلف ہوں مگر ان سب میں کوئی بات قدرِ مشترک ہو، جیسے حضورصلی اللہ علیہ وسلم کے معجزات وغیرہ۔
    متواتر کی ان اقسام کو مولوی عبید اللہ ملتانی غیر مقلد نے اپنی کتاب مرعات المفاتیح شرح مشکاۃ المصابیح بھی تسلیم کیا ہے مگر جناب چونکہ غیر مقلد ہیں اسلئے حضرت کشمیریؒ کا نام لیتے ہوئےشائد انکو شرم آتی ہے۔
    (مرعات المفاتیح شرح مشکاۃ المصابیح از مولوی عبیداللہ غیر مقلد ، جلد ۱ ص۱۸، مکتبہ الرحمٰن السلفیہ سرگودہ۔)

    اس تفصیل کے بعد معلوم ہوا کہ غسل کے فرائض کے ثبوت کے لئے کس درجہ کی دلیل درکار ہے، جیسا کہ ہمارے مخدوم ومحترم جناب جمشید بھا ئی نے وضاحت کی کہ اصل میں فرض ایک ہی ہے، جمشید بھائی پوسٹ نمبر ۱۰ میں فرماتے ہیں
    ’’اصل فرض غسل میں سارے جسم پر پانی بہاناہے۔لیکن چونکہ ناک اورمنہ دونوں بند رہتے ہیں اوراس میں بغیر پانی پہنچائے پانی کا پہنچنامشکل ہے لہذااس کو الگ سے ذکر کیاگیاہے۔لہذااسی کو احناف نے کلی اورناک میں پانی پہنچانے کو الگ فرض کے طورپر ذکر کیاہے۔اوریہ ان کی دقیقہ سنجی کی مثال ہے۔
    اگرصرف یہ کہاجاتا کہ پورے جسم پر پانی کابہانافرض ہے توبہت سارے لوگ اس غلط فہمی کا شکار رہ جاتے کہ شاورکے نیچے کھڑے ہوگئے اورسارے جسم پر پانی پہنچ گیاجب کہ عمومی طورپر یہ مشاہدہ ہے کہ ناک اورمنہ میں پانی پہنچائے بغیر نہیں پہنچتا۔اس کو الگ سے ذکر کرکے یہ بتادیاگیاہے کہ ان جگہوں پر بھی پانی پہنچانا فرض ہے۔اب یہ آپ کی مرضی ہے کہ چاہیں توصرف اس کو ایک فرض تسلیم کریں یاغسل کے تین فرض بنادیں(جمشید بھائی کی عبارت ختم ہوئی)۔‘‘


    جمشید بھائی کی بات پر یہ اشکال ہوسکتا ہے کہ سارے جسم پر پا نی پہنچانا تو فرض ہے مگر منہ اور ناک میں پانی پہنچانا کس دلیل سے ثابت ہے۔؟
    جواب یہ ہے کہ سنن دارقطنی میں عبداللہ بن عباسؓ سے روایت موجود ہے کہ جس نے غسل کیا مگر کلی کرنا اور ناک میں پانی ڈالنا بھول گیا تو وہ صرف ناک میں پانی ڈالے اور کلی کرے(غسل دوبارہ کرنے کی ضرورت نہیں)، اگراسی دوران نماز پڑھ لی ہے تو نماز دوبارہ لوٹائے۔
    حدیث کی الفاظ یہ ہیں

    عَنْ عَائِشَۃَ بِنْتِ عَجْرَدٍ ، فِي جُنُبٍ نَسِيَ الْمَضْمَضَةَ وَالِاسْتِنْشَاقَ ، قَالَتْ : قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ : يُمَضْمِضُ وَيَسْتَنْشِقُ ، وَيُعِيدُ الصَّلَاةَ
    (سنن الدارقطني جلد۱ ص ۱۱۶، بحوالہ نمازِ مسنون کلاں ص ۹۸، از مفسرِ قرآن حضرت مولانا صوفی عبدالمجیدخان سواتیؒ)
    اگر منہ اور ناک میں پانی ڈالے بغیر غسل ہوجاتا تونماز لوٹانےکا حکم نہیں دیا جا تا، معلوم ہوا کہ یہ بھی فرائض میں داخل ہیں، رہ گئی بات تمام جسم پر پانی بہانے کی تو اسکی دلیل کی بارے میں حضرت صوفی صاحبؒ فرماتے ہیں
    ‘‘(۳)تمام بدن پر پانی ڈالنا۔ (ہدایہ ج۱ ص۱۰)

    وَإِنْ كُنْتُمْ جُنُبًا فَاطَّّھَّرُوْا [المائدہ:۶]
    ترجمہ : ’’اوراگر تم جنابت کی حالت میں ہو تو خوب اچھی طرح طہارت حاصل کرو۔‘‘
    اور ظاہر ہے کہ اچھی طرح طہارت حاصل کرنا جب ہی ہوگا جب کہ تمام بدن پر پانی ڈالا جائے اور خوب مل کر جسم کو دھویا جائے۔اور جہاں جہاں پانی پہنچا ناممکن ہے ان حصوں میں پانی پہنچایا جائے۔
    (نمازِ مسنون کلاں ص ۹۸)
    الحمداللہ ہمارا یہ مسئلہ بالکل مدلل ہے۔
    آخر میں یہ کہنا چاہوں گا میں نے پہلی دفہ کوئی تحریر لکھی ہے، اس میں یقیناً غلطی ہوئی ہو گی،اگرکسی بھائی کو کسی بھی قسم کی کوئی بھی غلطی نظر آئے تو اسکی اصلاح کر دیں۔
    اس تحریر کی تیاری میں مندرجہ ذیل کتب سے مددلی گئی ہے۔
    ۱ـ: تحفۃ المناظر افادات مولانا ڈاکٹر منظور احمد مینگل مدظلہ العالی
    ۲ـ: دروسِ مناظرہ آڈیو ازمولانا ڈاکٹر منظور احمد مینگل مدظلہ العالی
    ۳ـ: انواراتِ صفدر از مولانا محمود عالم صفدر اوکاڑوی مدظلہ العالی
    ۴ـ: نمازِ مسنون کلاں از مفسرِ قرآن حضرت مولانا صوفی عبدالمجیدخان سواتی رحمۃ اللہ علیہ

    Last edited by usman bin rashid; 09-16-2012 at 12:10 AM.

  21. The Following 6 Users Say Thank You to usman bin rashid For This Useful Post:

    ishmaria (09-16-2012), Shahzad Sultan (09-16-2012), ملنگ (09-16-2012), أمة الله (09-16-2012), تلمیذ (04-10-2014), جمشید (09-16-2012)

  22. Join Date
    Apr 2010
    Location
    Karachi
    Posts
    1,320
    Thanks
    339
    Thanked 74 Times in 50 Posts

    MashaAllah Usman bhai buahat achee wazahat hai

  23. The Following User Says Thank You to Shahzad Sultan For This Useful Post:

    جمشید (09-16-2012)

+ Reply to Thread

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts